دل دیاں گللاں،صفہ نمبر پندرہ، شاعر دانیال ملک

دل دیاں گللاں،صفہ نمبر پندرہ، شاعر دانیال ملک

وہ آتی تب ہی اظہار محبت کرتا نا
اسے چومتا کسی دربار کی طرح
ماتھا چومتا اور پھر گلے سے لگاتا
خود کے آنسو پوچہتا یا اسے چپ کراتا

ساحل پے کھڑے رہ کر ڈوبتے سورج کو دیکھنا
نشانی ہے تنہائی کی جو محبت میں ملی ہے

تنہائی اور تکلیف کا تماشا دیکھنے آی تھی وہ
جاتے ہوے که گئی زندہ ہو ابھی مارے نہیں ہو
پیار محبت عشق کے سوا کچھ آتا نا تھا مجھے
یہی سب آتا تھا اور کچھ نا آتا تھا مجھے

دل دیاں گللاں، شاعر دانیال ملک

Copyrights © 2019. All rights reserved. www.pakistanonline.org

Daniyal Malik

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *